Islamic Education

All About Islam

ہمسایوں کے حقوق

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmailFacebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmail

 

 

اسلام نے ہمسایوں کو بھی بہت حقوق دیئے ہیں. ہمسائے وہ ہیں جن کا گھر آپ کے گھر کے ساتھ ہو یا آس پاس ہو. ان کو حقوق دینے کا مقصد یہ ہے کہ ان سے انسان کا واسطہ روز پڑتا ہے. اسلام میں ساتھ کام کرنے والے اور سفر کرنے والے بھی ہمسایہ کہلاتے ہیں۔ 

اسلام میں ہمسایوں کی درجہ بندی

۔ گھر کے بالکل ساتھ والے ہمسائے

۔ جن کا گھر آپ کے گھر سے قریب ہو

۔ جو آپ کے آس پاس رہتے ہیں

ہمسایوں کے حقوق

۔ ان کو کسی قسم کا نقصان نہ پہنچایا جائے

۔ ان کی زندگی میں دخل اندازی نہیں کی جائے

۔ ان کی مدد کی جائے

۔ ان سے اچھا سلوک کیا جائے

۔ ان سے اچھے طریقے سے ملا جائے

۔ جب ملاقات ہو مسکرا کر ملا جائے

۔ ان پر رحم کیا جائے

۔ ہمسایہ کی عزت کی جائے

۔ ان سے کبھی کبھی ملا جائے

۔ ان کو اپنے گھر بلایا جائے

۔ ان کی خوشی اور غم میں شریک ہوا جائے

۔ ان سے رابطہ رکھا جائے

۔ انہیں تحفہ دیا جائے

۔ ان کو کھانا بھیجا جائے

۔ ان کی تذلیل نہ کی جائے

۔ ان کا خیال رکھا جائے

۔ اگر وہ برے ہیں تو برداشت کیا جائے

۔ ان کے حق میں دعا کی جائے

۔ ان کی عزت کی جائے

۔اگر وہ غریب ہیں تو ان کو صدقہ خیرات دی جائے

۔ اگر وہ بیمار ہوں تو ان کی عیادت کی جائے

اگر ہمسائے غیر مسلم ہوں

اگر ہمسائے غیر مسلم ہوں تب بھی ان کو یہ سب حقوق حاصل ہیں

ہمسایوں کی اہمیت

 

اور اللہ تعالٰی کی عبادت کرو اور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو اور ماں باپ کے ساتھ سلوک و احسان کرو اور رشتہ داروں سے اور یتیموں سے اور مسکینوں سے اور قرابت دار ہمسایہ سے اور اجنبی ہمسایہ سے اور پہلو کے ساتھی سے اور راہ کے مسافر سے اور ان سے جن کے مالک تمہارے ہاتھ ہیں ، ( غلام کنیز ) یقیناً اللہ تعالٰی تکبّر کرنے والے اور شیخی خوروں کو پسند نہیں فرماتا ۔ سورت النساء آیت 36

حدیث سے ہمسایوں کی اہمیت

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ”جبرائیل علیہ السلام مجھے پڑوسی کے بارے میں باربار اس طرح وصیت کرتے رہے کہ مجھے خیال گزرا کہ شاید پڑوسی کو وراثت میں شریک نہ کر دیں۔“ صحیح بخاری کتاب اچھے اخلاق حدیث نمبر 6014

اور ان سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے بیان کیا ”واللہ! وہ ایمان والا نہیں۔ واللہ! وہ ایمان والا نہیں۔ واللہ! وہ ایمان والا نہیں۔ عرض کیا گیا کون: یا رسول اللہ؟ فرمایا وہ جس کے شر سے اس کا پڑوسی محفوظ نہ ہو. صحیح بخاری کتاب اچھے اخلاق حدیث نمبر 6016

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم فرمایا کرتے تھے ”اے مسلمان عورتو! تم میں سے کوئی عورت اپنی کسی پڑوسن کے لیے کسی بھی چیز کو ( ہدیہ میں ) دینے کے لیے حقیر نہ سمجھے خواہ بکری کا پایہ ہی کیوں نہ ہو۔“ صحیح بخاری کتاب اچھے اخلاق حدیث نمبر 6017

ہمسایوں کا خیال نہ رکھنے کی سزا

اللہ تعالیٰ اس انسان کو دنیا اور آخرت میں سزا دے گا جو ہمسایوں کا خیال نہیں رکھتے

 

 

اگر اس مکالمے میں ہم سے کوئی غلطی یا کوتاہی ہوئی ہے تو براہ مہربانی غلطی کی نشاندہی کر کے ہماری اصلاح میں مدد کیجیئے۔ اللہ ہماری چھوٹی بڑی غلطیوں کو معاف فرمائے اور ہماری اس کاوش کو اپنی بارگاہ میں قبول و مقبول فرمائے۔اللہ اس کاوش کو ہمارے خاندان کے لئے نجات کا موجب بنائے اور دین پر ہماری پکڑ کو اور مضبوط کرے. آمین 

Next Post

Previous Post

Leave a Reply

© 2019 Islamic Education

Theme by Anders Norén