Islamic Education

All About Islam

سورت البقرۃ

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmailFacebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmail

 

سورت البقرہ قرآن پاک کی دوسری سورت ہے اور آیات کے لحاظ سے سب سے لمبی سورت ہے۔ یہ سورت بہت سے احکامات کا مجموعہ ہے اور اس کا دور نزول بھی لمبے عرصے پر محیط ہے۔ یہ کہنا مناسب ہو گا کہ دور نبوتؐ کے شروع سے اختتام تک یہ سورت وقتاً فوقتاً نازل ہوتی رہی۔اس سورت کے بارے میں مختصر معلومات یہ ہیں۔

البقرہ کا مطلب

البقرہ کا مطلب ہے گائے۔ یہ نام اس سورت میں بیان کردہ گائے کے واقعے کی مناسبت سے دیا گیا ہے۔ جو کہ آیت نمبر 67 سے 73 میں بیان کیا گیا ہے۔

سورت البقرہ کا نزول

سورت البقرہ ایک مدنی سورت ہے اور اس کی 286 آیات ہیں۔ یہ سورت قرآن کی سب سے لمبی سورت ہے اور اس کے نزول کا وقت بھی سب سے لمبا ہے۔ مفسرین کے مطابق اس کی آخری آیات حج الوداع کے موقع پر نازل ہوئی تھیں۔

میں ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا کی خدمت میں حاضر تھا کہ ایک عراقی ان کے پاس آیا اور پوچھا کہ کفن کیسا ہونا چاہئے؟ ام المؤمنین نے کہا: افسوس اس سے مطلب! کسی طرح کا بھی کفن ہو تجھے کیا نقصان ہو گا۔ پھر اس شخص نے کہا ام المؤمنین مجھے اپنے مصحف دکھا دیجئیے۔ انہوں نے کہا کیوں؟ ( کیا ضرورت ہے ) اس نے کہا تاکہ میں بھی قرآن مجید اس ترتیب کے مطابق پڑھوں کیونکہ لوگ بغیر ترتیب کے پڑھتے ہیں۔ انہوں نے کہا پھر اس میں کیا قباحت ہے جونسی سورت تو چاہے پہلے پڑھ لے ( جونسی سورت چاہے بعد میں پڑھ لے اگر اترنے کی ترتیب دیکھتا ہے ) تو پہلے مفصل کی ایک سورت، اتری ( «اقرا باسم ربك» ) جس میں جنت و دوزخ کا ذکر ہے۔ جب لوگوں کا دل اسلام کی طرف رجوع ہو گیا ( اعتقاد پختہ ہو گئے ) اس کے بعد حلال و حرام کے احکام اترے، اگر کہیں شروع شروع ہی میں یہ اترتا کہ شراب نہ پینا تو لوگ کہتے ہم تو کبھی شراب پینا نہیں چھوڑیں گے۔ اگر شروع ہی میں یہ اترتا کہ زنا نہ کرو تو لوگ کہتے ہم تو زنا نہیں چھوڑیں گے اس کے بجائے مکہ میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر اس وقت جب میں بچی تھی اور کھیلا کرتی تھی یہ آیت نازل ہوئی «بل الساعة موعدهم والساعة أدهى وأمر‏» لیکن سورۃ البقرہ اور سورۃ نساء اس وقت نازل ہوئیں، جب میں ( مدینہ میں ) نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس تھی۔ بیان کیا کہ پھر انہوں نے اس عراقی کے لیے اپنا مصحف نکالا اور ہر سورت کی آیات کی تفصیل لکھوائی۔ صحیح بخاری کتاب قرآن کی فضیلت حدیث نمبر 4993

سورت البقرہ کی وضاحت

اس سورت کا موضوع مخصوص نہیں ہے بلکہ مختلف احکامات اور وضاحتوں کا مجموعہ ہے

۔ اس سورت میں حضرت آدم، حضرت نوسی اور حضرت ابراہیم کے دور کے منافقین، یہود، اور بت پرستوں کی مثالیں دی گئیں ہیں جن میں اللہ غیر مسلموں کو نصیحت کرتا ہے کہ وہ یا تو اسلام قبول کر لیں یا اپنے انجام کے لئے تیار ہو جائیں۔

۔ اس سورت کی کچھ آیات میں منافقین کی خصوصیات بیان کی گئی ہیں۔ جب ہمارے پیارے نبی کریم نے مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ کی جانب ہجرت کی تو وہاں ان کا سامنا منافقین سے ہوا۔ ان آیات مبارکہ کی مدد سے آپکو منافقین کی نشاندہی کرنے میں آسانی ہو گئی

۔ اس سورت کی کچھ آیات قرآن پاک کی اہمیت اور سچائی کی شہادت دیتی ہیں۔

۔ نماز، روزہ، زکوۃ، حج، جوا، شراب، سود، قرض، شادی، طلاق، اور ہیروشیلم سے کعبہ کی جانب منتقلی کی آیات بھی اس سورت کا حصہ ہے۔ اللہ نے نماز، زکوۃ، حج، روزہ کو فرض کیا اور شراب، سود، جوا سے بچنے کا حکم دیا۔

۔ اس سورت میں متقین کی خصوصیات بھی بیان کی گئی ہیں۔ جو کہ تقویٰ، نماز اور صدقہ ہیں۔

۔ زندگی،موت اور مرنے کے بعد جی اٹھنے کا بیان بھی اسی سورت میں ہی۔

۔ اس سورت کی کچھ آیات میں اللہ تعالیٰ کی بڑائی بیان کی گئی ہے اور اس کی تخلیق کا بیان بھی اس سورت کا حصہ ہے۔

سورت البقرہ کا مقصد

اس سورت میں 1000 احکامات، 1000 معلومات، اور 1000 پابندیاں مسلمان پرعائد کی گئی۔ یہ سورت انسان کو اس دنیا میں زندگی گزارنے کا طریقہ سکھاتی ہے. اگر ایک انسان اس آیت میں بیان کردہ احکامات پر عمل. کرے اور اس میں روکے گئے عوامل سے رک جائے تو اس کے لئے اس دنیا اور دائمی دنیا میں اللہ تعالیٰ کی جانب سے بہت سے انعامات ہیں۔

سورت البقرہ کی اہمیت

۔ سورت البقرہ گھر میں پڑھنا فائدہ مند ہے

۔ یہ انسان کو اس کے کام کی جگہ یا گھر کو بری نظر سے بچاتا ہے

۔ یہ بری بلاؤں کو گھر سے باہر رکھتی ہے

۔ یہ برکات کو گھر یا کام کی جگہ پر لانے کا موجب ہے

۔ بری نظر، جادو کا اثر، اور حسد کی بری طاقت سے انسان کو بچاتی ہے

۔ جب یہ سورت تلاوت کی جائے تو تین دن تک شیطان گھر میں داخل نہیں ہو سکتا

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اپنے گھروں کو قبرستان نہ بناؤ۔ وہ گھر جس میں سورۃ البقرہ پڑھی جاتی ہے اس میں شیطان داخل نہیں ہوتا“۔ امام ترمذی کہتے ہیں: یہ حدیث حسن صحیح ہے۔ جامع ترمذی شریف کتاب فضائل قرآن حدیث نمبر 2877

۔ اس سورت کو پڑھنے والے پر اور پڑھنے کی جگہ پر اللہ کی خاص رحمت ہوتی ہے

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس نے سورۃ البقرہ کی دو آخری آیتیں رات میں پڑھ لیں وہ اسے ہر آفت سے بچانے کے لیے کافی ہو جائیں گی۔ صحیح بخاری کتاب قرآن کے فضائل حدیث نمبر 5009

سورت البقرہ کا موضوع

اس سورت کا موضوع انسان کو ہدایت دینا ہے. یہ سورت دراصل یہود کے متعلق ہے اور اس میں حضرتموسی اور دوسرے انبیاء کی مثالیں بھی دی گئی ہیں. ان مثالوں کے زریعے اللہ نے یہود کو ڈرایا ہے کہ وہ یا تو اسلام. قبول کر لیں یا ان کا انجام دوزخ ہے کیونکہ وہ گمراہ ہیں۔

 

اگر اس مکالمے میں ہم سے کوئی غلطی یا کوتاہی ہوئی ہے تو براہ مہربانی غلطی کی نشاندہی کر کے ہماری اصلاح میں مدد کیجیئے۔ اللہ ہماری چھوٹی بڑی غلطیوں کو معاف فرمائے اور ہماری اس کاوش کو اپنی بارگاہ میں قبول و مقبول فرمائے۔اللہ اس کاوش کو ہمارے خاندان کے لئے نجات کا موجب بنائے اور دین پر ہماری پکڑ کو اور مضبوط کرے. آمین 

Next Post

Previous Post

Leave a Reply

© 2019 Islamic Education

Theme by Anders Norén