Islamic Education

All About Islam

زنا کاری

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmailFacebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmail

 

زنا اسلام کی رو سے ایک کبیرہ گناہ ہے۔ اس کی مختلف اقسام ہیں۔ کچھ اقسام دوسری سے برتر ہیں۔ اس گناہ پر حد کی سزا لاگو ہوتی ہے۔ قرآن پاک میں اس گناہ کا ذکر بارہا کیا گیا ہے۔ زنا شادی کے بعد بھی کیا جا سکتا ہے اور شادی سے پہلے بھی۔

زنا کا مطلب

زنا سے مراد نامحرم  مرد اور نامحرم عورت کے درمیان نکاح کے بندھن کے علاوہ ناجائز جسمانی تعلقات قائم ہوں

زنا کی تاریخ

جب حضرت آدم علیہ السلام اس دنیا سے رخصت ہو گئے تو شیطان نے موسیقی ایجاد کی (ممنوعات میں موسیقی ملاحظہ کیجئے)۔ لوگوں نے موسیقی کی محفلیں سجانا شروع کر دیں اور اس میں ناچ گانا ہونے لگا۔ تبھی ان محفلوں میں کھلے عام زنا کیا جانے لگا۔ یہ سب سے بڑے اجتماعی زنا کی محفلیں ہوتی تھیں۔ اس کے علاوہ حضرت محمد کے دور میں بھی زنا عام تھا۔ لوگ اس کو برا نہیں سمجھتے تھے۔ صحابہ بھی اس کام میں ملوث تھے کیونکہ یہ کام عام تھا جیسا غیر مسلم ممالک میں ہوتا ہے۔ مگر قرآن کی آیات آنے سے اس گناہ کی روک تھام ہوئی۔

زنا کیوں حرام ہے

قتل ایک انسانی جسم کو ختم کرنا ہے جبکہ زنا انسانی روح کو مترادف کرنے کے برابر ہے۔

زنا کے اثرات

زنا کے برے اثرات درج ذیل ہیں

۔ جب ایک عورت کم عمری میں زنا میں ملوث ہو جاتی ہے تو وہ اپنے آپ کو بس اسی قابل سمجھنے لگتی ہے۔ وہ سمجھنے لگتی ہے کہ وہ صرف اپنے جسم کی وجہ سے سراہی جا سکتی ہے اور یہی اس کی آخری پناہ گاہ ہے۔

۔ بہت سی دماغی بیماریاں اس سے جنم لیتی ہیں جیسے ڈپریشن، اکیلا پن، دماغی تناؤ، تعلیم کا نامکمل رہ جانا، کم عمری میں ماں بننے کی تکلیف اور پریشانی وغیرہ

۔ شادی شدہ اور سماجی زندگی تباہ ہو جاتی ہے

۔ یہ اقتصادی ، سماجی اور مذہبی طور پر غلط ہے

۔ زنا کے نتیجے میں بہت سی بیاریاں جنم لیتی ہے

زنا کی اقسام

زنا کی درج ذیل اقسام ہیں

محرم عورت کے ساتھ زنا

اسلام میں کسی بھی محرم عورت سے مثلاً ماں، بہن، بہٹی، پوتی، بھابھی، وغیرہ سے زنا کرنا سب سے بڑا گناہ سمجھا جاتا ہے۔

بوڑھا مرد جو زنا کرے

ایک بوڑھا مرد جس کی جنسی خواہشات تقریباً ختم ہو چکی ہوتی ہیں وہ زنا کرے تو یہ بھی سب سے زیادہ گناہ کی بات ہے۔

متعہ

متعہ نکاح سے مراد ایک وقتی نکاح ہے۔ یہ ایک وقت میں حلال تصور کیا جاتا تھا مگر فتح مکہ کے وقت اس سے منع فرمایا گیا تھا۔ اس کو اس لئے زنا قرار دیا جاتا ہے کیونکہ کوئی بھی نکاح جب وقتی طور پر کیا جاتا ہے تو وہ نکاح تسلیم نہیں کیا جاتا۔

تین طلاقوں کے بعد مرد اور عورت کا اکٹھا رہنا

جب ایک مرد اپنی بیوئ کو تین بار طلاق دے دے تو وہ اس کے بعد ان دونوں کا میان بیوی کی طرح اکٹھے رہنا بھی زنا کے مترادف ہے۔

( طلاق کا مکلالمہ دیکھیں)

طلاق کی نیت سے نکاح کرنا

جب ایک مرد یا عورت طلاق کی نیت سے کسہ سے نکاح کریں تاکہ وہ اور کسی سے یا اپنے سابقہ شریک حیات سے نکاح کر سکیں تو ایسا نکاح باطل۔ نکاح کہلاتا ہے اور اس کے نتیجے میں استوار ہونے والا میاں بیوئ کا رشتہ بھی زنا کہلاتا ہے۔

متبادل نکاح

اگر ایک آدمی دوسرے کو کہتا ہے کہ تم میری بیٹی یا بہن سے بلاحق مہر کے شادی کر لو اور اپنی بیٹی یا بہن سے اسی طرح میرا نکاح کروا دو تو یہ نکاح بھی باطل ہو گا اور زنا ہی کہلائے گا۔

ہم جنس پرستی

اسلام میں ہم جنس پرستی بھی اسی لئے منع ہے کیونکہ اس میں ہونے والا عمل بھی زنا ہی کہلاتا ہے۔

جانوروں سے ہم جنسی

جانوروں سے ہم جنسی بھی زنا ہی کہلاتی ہے۔

جسم کے حصوں کا زنا

کسی غیر محرم کو دیکھنا آنکھوں کا زنا، بات کرنا زبان کا زنا، غلط قسم کی گفتگو سننا کانوں کا زنا، نامحرم کو چھونا ہاتھوں کا زنا، گناہ کے کاموں کی جانب قدم بڑھانا پاؤں کا زنا ہے۔

زنا کی سزا

جب ایک غیر شادی شدہ مرد اور عورت زنا کریں تو ان کو 100 کوڑے مارے جائیں اور ایک سال کے لئے شہر سے باہر نکال دیا جائے۔

اگر ایک شادی شدہ مرد یا عورت زنا کریں تو ان کو سنگسار کر کے مار دینے کا حکم ہے۔

زنا کا ثبوت

زنا کے ثبوت کے لئے چار گواہ درکار ہیں۔ اس کے علاوہ اگر زانی چار بار جود بول دے کہ اس نے زنا کیا ہے تو کافی ہے۔

تمہاری عورتوں میں سے جو بے حیائی کا کام کریں ان پر اپنے میں سے چار گواہ طلب کرو ، اگر وہ گواہی دیں تو ان عورتوں کو گھروں میں قید رکھو ، یہاں تک کہ موت ان کی عمریں پوری کر دے ، یا اللہ تعالٰی ان کے لئے کوئی اور راستہ نکالے ۔ سورت النساء آیت 15

زنا کی گواہ

زنا کے گواہ کے لئے لازم ہے کہ وہ

۔ نیک

۔ صالح

۔ اور اسلامی تعلیمات پر عمل کرنے والا ہو

گواہ کا گواہی واپس لینا

اگر ایک یا زیادہ گواہ اپنی گواہی واپس لے لیتے ہیں تو ملزموں کو چھوڑ دیا جائے گا اور گواہ کو جھوٹی گواہی دینے جرم میں سزا ملے گی۔

زنا کی روک تھام

۔ کم عمری میں شادی کر دینا جب بالغ اس بات کا مطالبہ کرے۔

۔ حضرت یوسف کی زندگی سے مبال لینی چاہیئے کہ انہوں نے سب سے خوبصورت ہونے کے باوجود اللہ تعالیٰ کے احکامات پر عمل کرتے ہوئے زنا نہ کیا۔

۔ انسان کو معلوم ہونا چاہییے کہ روحانیت کسی بھی خوبصورتی سے بہتر ہے۔

۔ ایک انسان کو معلوم ہونا چاہیئے کہ سچی محبت نکاھ کا انتظار کرتی ہے نا کہ زنا کے لئے اکساتی ہے۔

۔ خود پسندی سے بچنا چاہیئے۔

قرآن اور زنا

۔ خبردار زنا کے قریب بھی نہ پھٹکنا کیونکہ وہ بڑی بے حیائی ہے اور بہت ہی بری راہ ہے ۔ سورت بنی اسرائیل آیت 32

۔ زنا کار عورت و مرد میں سےہر ایک کو سو کوڑے لگاؤ ۔ ان پر اللہ کی شریعت کی حد جاری کرتے ہوئے تمہیں ہرگز ترس نہ کھانا چاہیئے ، اگر تمہیں اللہ پر اور قیامت کے دن پر ایمان ہو ان کی سزا کے وقت مسلمانوں کی ایک جماعت موجود ہونی چاہیے ۔ سورت النور ایت 2

۔  اور اللہ کے ساتھ کسی دوسرے معبود کو نہیں پکارتے اور کسی ایسے شخص کو جسے قتل کرنا اللہ تعالٰی نے منع کر دیا ہو وہ بجز حق کے قتل نہیں کرتے نہ وہ زنا کے مرتکب ہوتے ہیں اور جو کوئی یہ کام کرے وہ اپنے اوپر سخت وبال لائے گا ۔ سورت الفرقان ایت 68

۔ اور جو لوگ اپنی شرمگاہوں کی ( حرام سے ) حفاظت کرتے ہیں ۔ سورت المعارج آیت 29

حدیث اور زنا

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : مجھ سے سیکھ لو ، مجھ سے سیکھ لو ، مجھ سے سیکھ لو ( جس طرح اللہ نے فرمایا تھا : یا اللہ ان کے لیے کوئی راہ نکالے ۔ ( النساء : 15 : 4 ) اللہ نے ان کے لیے راہ نکالی ہے ، کنوارا ، کنواری سے ( زنا کرے ) تو ( ہر ایک کے لیے ) سو کوڑے اور ایک سال کی جلا وطنی ہے اور شادی شدہ سے زنا کرے تو ( ہر ایک کے لیے ) سو کوڑے اور رجم ہے۔ صحیح مسلم کتاب حدود کا بیان  حدیث 4414

 

اگر اس مکالمے میں ہم سے کوئی غلطی یا کوتاہی ہوئی ہے تو براہ مہربانی غلطی کی نشاندہی کر کے ہماری اصلاح میں مدد کیجیئے۔ اللہ ہماری چھوٹی بڑی غلطیوں کو معاف فرمائے اور ہماری اس کاوش کو اپنی بارگاہ میں قبول و مقبول فرمائے۔اللہ اس کاوش کو ہمارے خاندان کے لئے نجات کا موجب بنائے اور دین پر ہماری پکڑ کو اور مضبوط کرے۔ آمین )

 

Next Post

Previous Post

Leave a Reply

© 2019 Islamic Education

Theme by Anders Norén