Islamic Education

All About Islam

الخالق

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmailFacebooktwittergoogle_plusredditpinterestlinkedinmail

 

الخالق کا مطلب ہے تخلیق کرنے والا۔ الخالق کا لفظ قرآن پاک میں اللہ کی صفت کے طور پر 1 دفعہ استعمال کیا گیا ہے۔ الخالق کا مطلب ہے وہ تخلیق کرنے والا جو کسی بھی نمونے کے  بغیر تخلیق کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو۔ یہ ایک ایسی صفت ہے جو صرف اللہ کی ذات میں ہی ہو سکتی ہے۔ بغیر کسی نمونے کے کوئی چیز تخلیق کرنا کسی انسان کی خوبی نہیں ہو سکتی۔ اللہ کی تخلیقات کو دیکھ کر یہ بات بلا شبہہ کہی جا سکتی ہے کہ وہ بہترین خالق ہے۔  

اللہ اور انسان کی تخلیق کا فرق 

اس دنیا میں آئے دن نئی ایجادات ہوتی رہتی ہیں اور انسان اپنی تخلیق پر بہت فخر کرتا ہے مگر اللہ کی تخلیق اور انسان کی تخلیق میں واضح فرق یہ ہے کہ  

 ۔ اللہ کو کچھ تخلیق کرنے کے لئے کسی مواد کی ضرورت نہیں ہے مگر اس کے برعکس انسان کو اپنی چیز بنانے کے لئے اللہ کے بنائے ہوئے مواد کو استعمال کرنے کی ضرورت پڑتی ہے۔  

۔  اللہ کو کسی باقائدہ نمونے کی ضرورت نہیں ہے مگر انسان کسی موجودہ نمونے کے بغیر کام نہیں کر سکتا۔  

۔ انسان اپنی تخلیق کے لئے اللہ کی تخلیق کردہ چیزوں کا محتاج ہے جبکہ اللہ کی ذات اس طرح کی کسی محتاجی سے بالکل پاک ہے۔  

۔ انسان کی سوچ تخلیق کے معاملے میں محدود ہے جبکہ اللہ کی ذات لامحدود ہے۔  

5۔ انسان کو اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لا کر کچھ تخلیق کرنے میں وقت اور محنت درکار ہے مگر اللہ تعالی کو نہ وقت کی ضرورت ہے اور نہ محنت کی وہ بس کن کہتا ہے اور سب ہو جاتا ہے۔  

الخالق کا بیان

اللہ کو الخالق اس لئے نہیں کہا گیا کیونکہ وہ تخلیق کرتا ہے بلکہ وہ خالق ہے اس لئے تخلیق کرتا ہے۔ اللہ نے سب سے پہلے قلم تخلیق کیا.  کسی چیز کی تخلیق کا وقت، اس چیز کی خصوصیات، صفات، وضع قطع سب اللہ کی تخلیق کا حصہ ہیں۔۔ قرآن پاک میں دو دفعہ اللہ کو احسن الخالقین کہا گیا ہے کیونکہ وہ سب سے بہترین خالق ہے 

قرآن کا بیان  

۔اور وہ بنی اسرائیل کی طرف رسول ہو گا کہ میں تمہارے پاس تمہارے رب کی نشانی لایا ہوں میں تمہارے لئے پرندے کی شکل کی طرح مٹی کا پرندہ بناتا ہوں ، پھر اس میں پھونک مارتا ہوں تو وہ اللہ تعالٰی کے حکم سے پرندہ بن جاتا ہے اور اللہ تعالٰی کے حکم سے میں مادر زاد اندھے کو اور کوڑھی کو اچھا کر دیتا ہوں اور مُردوں کو زندہ کر تا ہوں اور جو کچھ تم کھاؤ اور جو اپنے گھروں میں ذخیرہ کرو میں تمہیں بتا دیتا ہوں اس میں تمہارے لئے بڑی نشانی ہے ، اگر تم ایمان لانے والے ہو ۔سورت آل عمران آیت 49۔  

۔جب کہ اللہ تعالٰی ارشاد فرمائے گا کہ اے عیسیٰ بن مریم! میرا انعام یاد کرو جو تم پر اور تمہاری والدہ پر ہوا ہے جب میں نے تم کو روح القدس سے تائید دی ۔ تم لوگوں سے کلام کرتے تھے گود میں بھی اور بڑی عمر میں بھی جب کہ میں نے تم کو کتاب اور حکمت کی باتیں اور تورات اور انجیل کی تعلیم دی اور جب کہ تم میرے حکم سے گارے سے ایک شکل بناتے تھے جیسے پرندے کی شکل ہوتی ہے پھر تم اس کے اندر پھونک مار دیتے تھے جس سے وہ پرندہ بن جاتا تھا میرے حکم سے اور تم اچھا کر دیتے تھے مادر زاد اندھے کو اور کوڑھی کو میرے حکم سے اور جب کہ تم مردوں کو نکال کر کھڑا کر لیتے تھے میرے حکم سے اور جب کہ میں نے بنی اسرائیل کو تم سے باز رکھا جب تم ان کے پاس دلیلیں لے کر آئے تھے پھر ان میں جو کافر تھے انہوں نے کہا کہ بجز کھلے جادو کے یہ اور کچھ بھی نہیں ۔ سورت المائدہ آیت 110 

۔ہم نے تمہارے اوپر سات آسمان بنائے ہیں اور ہم مخلوقات سے غافل نہیں ہیں ۔ سورت المومنون آیت 17۔  

دعا کا وسیلہ 

اس نام کے وسیلے سے اللہ سے رحمت اور مشکلات سے بچاو کی دعا کی جا سکتی ہے. اس نام کا بے حساب ورد آفات سے بچاءو کے لئے مفید ہے 

 

اگر اس مکالمے میں ہم سے کوئی غلطی یا کوتاہی ہوئی ہے تو براہ مہربانی غلطی کی نشاندہی کر کے ہماری اصلاح میں مدد کیجیئے۔ اللہ ہماری چھوٹی بڑی غلطیوں کو معاف فرمائے اور ہماری اس کاوش کو اپنی بارگاہ میں قبول و مقبول فرمائے۔اللہ اس کاوش کو ہمارے خاندان کے لئے نجات کا موجب بنائے اور دین پر ہماری پکڑ کو اور مضبوط کرے. آمین 

Next Post

Previous Post

Leave a Reply

© 2019 Islamic Education

Theme by Anders Norén